1,220

بنا کر فقیروں کا ہم بھیس غالبؔ


جہاں تیرا نقش قدم دیکھتے ہیں
خیاباں خیاباں ارم دیکھتے ہیں

دل آشفتگاں خال کنج دہن کے
سویدا میں سیر عدم دیکھتے ہیں

ترے سرو قامت سے اک قد آدم
قیامت کے فتنے کو کم دیکھتے ہیں

تماشا کہ اے محو آئینہ داری
تجھے کس تمنا سے ہم دیکھتے ہیں

سراغ تف نالہ لے داغ دل سے
کہ شب رو کا نقش قدم دیکھتے ہیں

بنا کر فقیروں کا ہم بھیس غالبؔ
تماشائے اہل کرم دیکھتے ہیں

کسو کو زخود رستہ کم دیکھتے ہیں
کہ آہو کو پابند رم دیکھتے ہیں

خط لخت دل یک قلم دیکھتے ہیں
مژہ کو جواہر رقم دیکھتے ہیں

مرزا غالب

بنا کر فقیروں کا ہم بھیس غالبؔ

Bana Kar Faqeeroon Ka Hum Bhais Ghalib
Tamashay Ahl e Karam Daikhty Hain
Mirza Ghalib


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں