1,988

یہ کربلا ہے وہی – محمد فیضی


وہی علم ہے، وہی لوگ، قافلہ ہے وہی
وہی سلگتی ہوئی ریت، راستہ ہے وہی

وہی چھدی ہوئی مشکیں، وہی کٹے بازو
لب زمانہ پہ عالم بھی پیاس کا ہے وہی

وہی علم ہے، وہی لوگ، قافلہ ہے وہی

وہی جلے ہوئے خیمے، وہی پھٹی چادر
وہی ہیں زخم، اذیت کی انتہا ہے وہی

وہی رعونت شاہی، وہی تکبر حکم
مگر حسین رضی اللہ تعالٰی عنہ کی حکمت کا فیصلہ ہے وہی

چلو ادا کریں مل کر امام رضی اللہ تعالٰی عنہ کی سنت
وہی ہیں جابروغاضب یہ کربلا ہے وہی

محمد فیضی

Wahi Alm Hay, Wahi Log, Qfla Hay Wahi
Wahi Sulgti Hui Rait, Rasta Hay Wahi
Wahi Chadi Hui Mashken, Wahi Ktay Bazu
Labbe Zmana Peh Aalm Bhi Pyas Ka Hay Wahi
Wahi Jlay Huy Khemay, Wahi Phti Chaadr
Wahi Hen Zakhm Azziyat Ki Inteha Hay Wahi
Wahi Raont e Shahi, Wahi Tkbbr e Hukm
Mgr Hussain Ki Azmat Ka Faisla Hay Wahi
Chglo Ada Kren Mil Ker Amam Ki Sunnat
Wahi Hen Jaabr o Ghasib, Ye Krbla Hay Wahi


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں