1,061

تیرے کُن کے محتاج بندے

ہم کتنے ہی ارادے باندھ لیں
اُس کے کُن کے محتاج رہیں گے

کُن کے محتاج

تیرا کُن سنوں کر معجزہ
تیری ذات سے کیا بعید ہے
تُو جو چاہے پل میں سدھار دے
میرا جتنا بگڑا نصیب ہے
میری بگڑی پل میں بنا دے نہ
مجھے پھر سے مجھ سے ملا دے نہ
فقط ایک کُن کا سوال ہے

محض ایک بھیک عطاء کرو
میرے چارہ گر میرے چارہ ساز
مجھے درد سے رہا کرو
تُو جو ماں سے بڑھ کے ہے چاہتا
رہوں کیوں میں پھر بھی بلکتا
تیرے بس میں ہے میرے مالکا
فقط ایک کُن کا سوال ہے

میرے لفظ بکھرے ہوئے سہی
میری بے ربط سی دعا سہی
تجھے دل کا حال پتہ تو ہے
تجھے میرے درد پتہ تو ہیں
کہ میں لاکھ بد، برا سہی
تیرے در پہ آیا ہوں بھیک دے
فقط ایک کُن کا سوال ہے

Hum Kitnay Hi Iraday Bandh Lain
Uskay Kunn Kay Mohtaj Rahaingy

اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

تیرے کُن کے محتاج بندے” ایک تبصرہ

اپنا تبصرہ بھیجیں