1,506

دیارِ عشق میں اپنا مقام پیدا کر​ (علامہ محمد اقبال)


دیارِ عشق میں اپنا مقام پیدا کر !​
نیا زمانہ، نئے صبح و شام پیدا کر​

​خدا اگر دلِ فطرت شناس دے تجھ کو​
سکوتِ لالہ و گل سے کلام پیدا کر​

​اٹھا نہ شیشہ گرانِ فرنگ کے احساں​
سفالِ ہند سے مینا و جام پیدا کر​

میں شاخِ تاک ہوں، میری غزل ہے میرا ثمر​
مرے ثمر سے مئے لالہ فام پیدا کر​

​مِرا طریق امیری نہیں فقیری ہے​
خودی نہ بیچ ، غریبی میں نام پیدا کر

Diyaar e Ishq Mein Apna Muqaam Paida Kar
Niya Zamana, Naye Subah o Shaam Paida Kar
Allama Muhammad Iqbal


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں