4,590

پڑھنے والوں کا قحط ہے


پڑھنے والوں کا قحط ہے ورنہ
گرتے آنسو کتاب ہوتے ہیں

بھلے وقتوں کی بات ہے کہ چھوٹے چھوٹے کچے گھروں میں اکثریت قیام پزیر تھی کچے صحن پر ڈالے گئی شام ڈھلے پانی کو سوندھی خوشبو پاکستان کے علاوہ شائد ہی کسی اور پاک مٹی کے نصیب میں ہو شام سے پہلے لوگوں کی بڑھتی ہوئی چہل پہل اورکچھ دور برگد کے کسی گھنے بوڑھے پیڑ کے نیچے بٰیٹھ کر عزتوں کے معاملات کو رشتوں میں پرونے والے پنچائیتی اراکین دولت کی نمائش سے کوسوں دور تھے ‘ بان کی بُنی ہوئی کھردری چارپائی پر سفید براق چادر ڈالے اور لشکتے چمکتے گاؤ تکئے سے ٹیک لگائے گاؤں کا بڑا جس کا ہر فیصلہ قبولَ عام تھا کہ بڑے بریف کیس نہیں چلتے تھے۔

اگر ایک گھر میں ماتم ہوتا تو پورا گاؤں سوگوار ہوتا فضا میں رقت پائی جاتی تھی اور لوگوں کے چہرے غم وحزن کا شکار دکھائی دیتے تھے ‘سانجھ کا زمانہ تھا رکھ رکھاؤ سادہ مگرصفائی کا اعلیٍ معیار رکھتا تھا ‘ فکر اورپریشانی نہیں تھی غذا سادی تھی مگر چہرے چمکتے تھے۔ صبح تڑکے منہ اندھیرے مرغ کی بانگ اذان کے ساتھ ہی فضاکو جگا دیتی اور سارے گاؤں میں زندگی کی لہر دوڑ جاتی ‘ دھواں اٹھتے کچے گھر اور بچوں کے رونے کی آوازیں کہیں ٹن ٹن کرتے بیلوں کے گلے کی گھنٹیاں بتا دیتیں کہ بیل کو جوتا جا رہا ہے کھیت میں ہل چلانے کی تیاری شروع ہو گئی مکھن خشک روٹیوں کو ملائم بنا کر ساتھ چھاچھ ملی لسی ہر صبح وہ فرحت بخش ٹھنڈا ناشتہ جو تپتے سورج کی گرمی کو بھی ٹھنڈا رکھتا تھا۔

آج ہر کسی میں احساس کی کمی کا رونا دوسرا تو روتا ہےلیکن اپنے اندرکی بے حسی ہم میں سے کسی کو دکھائی نہیں دیتی۔ کاروبار ہے مقام ہے رشتے داری ہے ادارے ہیں ایک احمقانہ دوڑ کا ہم سب اس لئے شکار ہیں کہ اصل مقصد بھول گئے دینے والے ہاتھ لینے والی قوم کی مانند دکھائی دیں تو یہی ہوتا ہے آج کسی کا درد سانجھا درد نہیں ہے بلکہ اسکا اپنا انفرادی فعل ہے ۔دولت کی غیر منصفانہ تقسیم نے رویے خوفزدہ کر دئیے ہیں یہی بے حسی ہے جو ہمیں برما شام مصر بوسینیا فلسطین کشمیر کی آہ و بکاہ سننے سے محروم رکھتی ہے مفادات کے بھرے ہوئے بریف کیس ہماری زبانوں کو چُپ کے تالوں سے پابند کر گئے۔

مصلحت تو امتَ مسلمہ کا شیوہ نہیں تھا حق پر ڈٹ جانا ان کا وطیرہ تھا مظلوم کی فریاد پر درس و تدریس کو نا مکمل چھوڑتے ہوئے محمد بن قاسم وہی وقت تھا جب نکل کر ظالموں کو کیفر کردار تک پہنچاتا تھا۔

لاکھوں آنکھیں بہہ رہی ہیں اور ہم سمجھ نہیں پا رہے مگر ہر آنسو کے پیچھے کوئی درد کا عنوان ہے؟ کوئی تکلیف اور کرب ہے اور اگر ہم باشعور ہوتے تو جانتے کہ ہر آنسو ایک سبق نہیں مکمل کتاب ہے۔

Parhany Waloon Ka Qehat Hai Warna
Girtay Ansoo Kitaab Hotay Hein


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں