884

اللہ سے جڑنے کے لیئے ٹوٹنے کا انتظار

پتہ نہیں ہم اللہ سے جڑنے کے لیئے
اپنے ٹوٹنے کا انتظار ہی کیوں کرتے ہیں

یہ انسانی فطرت ہے کہ جب انسان خوش ہوتا ہے تو اپنے خالق کو بھول جاتا ہے اور اپنے گناہوں کی لزٌتوں میں ڈوبا رہتا ہے وہ غموں کو بھول جاتا ہے اور اپنا دنیا سے جانا تک بھول جاتا ہے پھر اللہ تعالیٰ اسکو غموں کا جھٹکا دے کر اپنی طرف مائل کرتاہے-

پتہ نہیں ہم اللہ سے جڑنے کے لیئے

امام غزالی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ اس دنیا میں “خیر” اور “شر” ملے جلے رہتے ہیں،اس میں “تقویٰ” کے دواعی بھی موجود ہیں،اور فسق و فجور کے بھی۔بہت سی چیزیں ایسی ہیں جو آپ کو نیکی کی ترغیب دیتی ہیں،اور بہت سی وہ ہیں جو آپ میں گناہ کا داعیہ پیدا کرتی ہیں،آپ کا فرض یہ ہے کہ گناہ کے دواعی کو مغلوب کرکے نیکی کے دواعی کو اس پر غالب کردیں۔

امام غزالی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ اس کی مثال اس “سونے” کی سی ہے جس میں کھوٹ ملا ہوا ہو،ظاہر ہے کہ ایسے سونے سے آپ اس وقت تک کام نہیں لے سکتے جب تک کہ سونے کو کھوٹ سے الگ نہ کرلیں۔جس کا واحد ذریعہ آگ کی تپش ہے،یہ آگ کی تپش ہی سونے کو کھوٹ سے جدا کرتی ہے۔

امام غزالی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ بالکل اسی طرح انسان کے “نیک” کو “بد” سے ممتاز کرنے کے لئے بھی “تپش” کی ضرورت ہے اور یہ تپش جو انسان کو کھوٹ سے نجات عطا کرتی ہے،دو طرح کی ہے،ایک عذابِ جہنم کی تپش کیونکہ مومن کے لئے جہنم کی آگ بھی درحقیقت کھوٹ ہی کو الگ کرنے کے لئے ہوگی،محض جلانا مقصد نہیں ہوگا،بلکہ پاک صاف کرکے جنت میں داخل کرنا مقصود ہوگا(بخلاف کافروں کے،کہ انہیں دائمی طور پر جلنے ہی کے لئے جہنم میں ڈالا جائے گا)اس لئے قرآن کریم نے فرمایا

(وھل نجازی الا الکفور)
دوسری قسم کی “تپش” حسرت و ندامت کی تپش ہے،یہ ایسی آگ ہے جو اس دنیا میں کھوٹ کو پگھلا سکتی ہے۔

امام غزالی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ انسان کو کھوٹ سے نجات حاصل کرنے کے لئے ان دو قسموں میں سے کسی ایک قسم کی آگ میں جلنا ضروری ہے،اب اگر وہ چاہے تو جہنم کی آگ کو اختیار کرلے،اور اگر یہ بات اسے مشکل معلوم ہوتی ہے،چنانچہ واقعتاً بھی یہ بڑی مشکل ہے۔۔۔۔تو اس کے سوا چارہ نہیں کہ اسی دنیا میں اپنے دل کے اندر حسرت و ندامت کی تپش اور سوزش پیدا کرے،اسی تپش اور سوزش کا نام توبہ ہے۔

حدیث میں ارشاد فرمایا گیا ہے
(انما التوبۃ الندامۃ)
توبہ ندامت ہی کا نام ہے

Pta Nahi Hum Allah Say Jurnay Kay Liye
Apnay Tootne Ka Intzar Hi Kiun Krtay Hen

اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اللہ سے جڑنے کے لیئے ٹوٹنے کا انتظار” ایک تبصرہ

اپنا تبصرہ بھیجیں