984

مجھے راستوں نے تھکا دیا

مِری منزلوں کو خبر کرو
مجھے راستوں نے تھکا دیا
[ساحل محمود ]

منزلوں کا مسافر

کبھی آسماں پہ بِٹھا دیا
تو کبھی نظر سے گرا دیا

غمِ عاشقی کی نوازشیں
ہمیں شعر کہنا سکھا دیا

مِری منزلوں کو خبر کرو
مجھے راستوں نے تھکا

Meri Manzlon Ko Khbr Kro
Mujhy Raston Nay Thka Dia
Saahil Mehmood

اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں