2,922

سہارا جب نہیں ہوتا بزرگوں کا تو


سہارا جب نہیں ہوتا بزرگوں کا تو بچہ بھی
شکم کی بھوک کی خاطر پڑھائی چھوڑ دیتا ہے

پاکستان میں بڑھتے ہوئے تعلیمی اخراجات اور دن بدن مہنگائی میں اضافے کے پیش نظر خدشہ ہے کہ ہمارے ملک میں بجائے چائلڈ لیبر کم ہونے کے مزید بڑھے گی پاکستان کو بنے 68 سال ہو چکے ہیں ایسا ملک جو اسلام کے نام پر وجود میں آیا تھا تاکہ سب مسلمان یہاں آزادی سے زندگی گزار سکیں سب کو ان کے حقوق ملیں پھر کیا وجہ ہے کہ نوعمر بچے اپنے بنیادی حقوق وتعلیمی حقوق سے محروم ہیں اور مزدوری کرنے پر مجبور ہیں

آج تک کسی بھی حکومت نے ٹھوس بنیادوں پر کوئی حکمت عملی مرتب نہیں دی جس سے چائلڈ لیبر کو روکا جا سکے ایسا لگتا ہے کہ ہم نے بحیثیت مجموعی چائلڈ لیبر کو اپنے اوپر تسلیم کر لیا ہے حالات سے مجبور ہوکرہنسنے کھیلنے کے دنوں میں معصوم بچے کام کرنے نکل کھڑے ہوتے ہیں جو یقیناً اس معاشرے کیلئے ایک المیہ فکر ہے بچوں کی مزدوری کے پیچھے ایک بڑی اہم وجہ غربت ہے بچے کسی بھی قوم کا مستقبل اور سرمایہ ہوتے ہیں معصوم بچے جو کسی بھی معاشرے میں ایک پھول کی حیثیت رکھتے ہیں اور معاشرے کی ایک انتہائی معصوم اور حساس پرت ہوتے ہیں ،جن کی موجودگی سے گھروں میں رونق ہوتی ہے اور جنہیں پڑھ لکھ کر ملک کے مستقبل کا معمار بننا ہوتا ہے لیکن جب حالات سے مجبور ہو کران بچوں کو ہنسنے کھیلنے کے دنوں میں محنت مشقت پر مجبور کر دیا جائے تو یقیناً اس معاشرے کیلئے ایک المیہ فکر ہے پاکستان میں بڑھتے ہوئے تعلیمی اخراجات اور دن بدن مہنگائی میں اضافے کے پیش نظر خدشہ ہے کہ ہمارے ملک میں بجائے چائلڈ لیبر کم ہونے کے مزید بڑھے گی ، پاکستان میں گھریلو ملازمین کے ساتھ جو سلوک روا رکھا جاتا ہے، اس کو اگر انسانی حقوق کی بدترین خلاف ورزی کہا جائے تو غلط نہ ہو گا۔ اس وقت پاکستان میں لاکھوں گھریلو ملازمین شہروں اور دیہات میں نہایت کم اجرت پر دن رات کام کرتے ہیں۔ ان میں بڑی تعداد کم عمر بچے اور بچیاں خاص طور پر ظلم و جبر کی چکی میں پس رہی ہیں۔

شہروں میں پڑھے لکھے خاندان ہوں یا دیہات کے نیم خواندہ چودھری وڈیرے، خان اور ملک یہ سب اپنے ملازمین کو انسان نہیں زمین پر رینگنے والے کیڑے مکوڑے یا جانور سمجھتے ہیں۔ سارا دن کوھلو کے بیل کی طرح گھٹیا سے گھٹیا کام کرنے کے باوجود ان سے جانوروں سے بھی بدتر سلوک ہوتا ہے۔ جانوروں کو تو پھر بھی آرام کا موقع ملتا ہے۔ کھانے کو چارہ ملتا ہے پینے کو پانی ملتا ہے موسم کے حساب سے سرد و گرم جگہ ملتی ہے۔ مگر ان ملازمین کو صرف کھانے کیلئے دو وقت کی روکھی سوکھی روٹی یا بچا کچھا کھانا نصیب ہوتا ہے۔ بات بات پر جھڑکیاں، مار پیٹ، گال گلوچ کا ان کو ہر وقت سامنا رہتا ہے۔ کام کاج کے کوئی اوقات کا ر مقرر نہیں۔ تنخواہ کا کوئی معیار مقرر نہیں۔ چھٹیوں کا تصور ہی ان کیلئے بے معنیٰ ہے۔ انہیں ہفتے کے سات دن 24 گھنٹے بارہ مہینے صرف اور صرف کام اور کام کرنا ہوتا ہے۔ یہ توبڑے بڑے گھروں کی حالت ہے جہاں ان بچوں کو زر خرید غلاموں کی طرح خریدا جاتا ہے۔ ان بچو ں کے والدین غربت کے ہاتھوں مجبور ہو کر ان کم عمر بچوں کو چند ہزار روپوں کی خاطر ان امرا کے گھر میں اس اُمید پر بھیجتے ہیں کہ وہاں انہیں کم از کم کھانا اور سر چھپانے کی جگہ تو میسر ہو گی، مگر وہ بھول جاتے ہیں کہ ہمارے اشرافیہ میں خاندانی اشرافیہ کی تعداد نہ ہونے کے برابر ہے۔ یہ سب نو دولتیے ہیں۔ یہ خود کمی کمین سے اُٹھ کر نواب سردار ، خان، شاہ اور چودھری بنے ہیں۔ انہیں کیا معلوم کے ملازم کے غلام کے حقوق کیا ہیں۔

یہ کام کرنیوالے بچے بات بات پر جھڑکیاں سہتے ہیں۔ مار کھاتے ہیں۔ انہیں پہننے کو اترن ملتی ہے جو صرف تن ڈھانپنے کے کام آتی ہے۔ یہ کام کرنیوالے بچے اور بچیاں ان اشرافیہ کی بگڑی ہوئی اولادوں اور ان اشرافیہ کے ہاتھوں کارندوں، نوکروں اور غنڈوں کے ہاتھوں عام طور پر جسمانی اور جنسی تشدد کا نشانہ بنتے ہیں۔

قانون دان ہوں یا افسر، تاجر ہو یا صنعتکار، سیاستدان ہوں یا چودھری ، خان اور شاہ و مخدوم یہ سب ان کا استحصال کرتے ہیں۔ برسوں انہیں ماں باپ سے ملنے نہیں دیا جاتا۔ اگر وہ آئیں تو انہیں جھڑک کر بھگا دیا جاتا ہے۔ ان کے لیئے بہتری کے سب کام ہماری حکومتوں نے ہی کرنے ہیں۔ ان کیلئے آسمان سے اب کوئی مسیحا نہیں آئیگا۔ ان لاکھوں بچوں کو جو چائلڈ لیبر کہلاتے ہیں، سڑکوں ، دکانوں سے لے کر گھروں تک میں اذیت بھری زندگی بسر کر رہے ہیں، جنہیں آواز بلند کرنے کی اجازت نہیں ، بولنے ، احتجاج کا حق نہیں۔ ان بچوں کو انسانوں کی اولاد تسلیم کرنا ہو گا۔ انسانی حقوق دینا ہوں گے۔

Sahara Jab Nahin Hota Buzurgoon Ka To Bacha Bhi
Shikam Ki Bhook Ki Khatir Parhai Choor Daita Hai


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں