3,469

عمر بیت جاتی ہے اِک گھر بنانے میں


عمر بیت جاتی ہے اِک گھر بنانے میں
لوگ آہ بھی نہیں کرتے بستیاں جلانے میں

اِک گھر بنانے میں۔۔۔

لوگ ٹوٹ جاتے ہیں اک گھر بنانے میں
تم ترس نہیں کھاتے بستیاں جلانے میں

اور جام ٹوٹیں گے اس شراب خانے میں
موسموں کے آنے میں، موسموں کے جانے میں

ہر دھڑکتے پتھر کو لوگ دل سمجھتے ہیں
عمر بیت جاتی ہے دل کو دل بنانے میں

فاختہ کی مجبوری یہ بھی کہہ نہیں سکتی
کون سانپ رکھتا ہے اس کے آشیانے میں

دوسری کوئی لڑکی زندگی میں آئے گی
کتنی دیر لگتی ہے اس کو بھول جانے میں

بشیر بدر

Umr Beet Jati Hay Ik Ghar Bnanay Mein
Log Aah Bhi Nahi Krtay Bastiyan Jlany Mein


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں