747

ایک نوجوان کے نام


ترے صوفے ہیں افرنگی ترے قالیں ہیں ایرانی
لہو مجھ کو رلاتی ہے جوانوں کی تن آسانی

Your sofas are from Europe, your carpets from Iran
This slothful opulence evokes my sigh of pity

امارت کیا شکوہ خسروی بھی ہو تو کیا حاصل
نہ زور حیدری تجھ میں نہ استغنائے سلمانی

In vain if you possess Khusroe’s imperial pomp
If you do not possess prowess or contentment

نہ ڈھونڈ اس چیز کو تہذیب حاضر کی تجلی میں
کہ پایا میں نے استغنا میں معراج مسلمانی

Seek not thy joy or greatness in the glitter of Western life
For in contentment lies a Muslim’s joy and greatness

شاہیں

عقابی روح جب بیدار ہوتی ہے جوانوں میں
نظر آتی ہے ان کو اپنی منزل آسمانوں میں

When an eagle’s spirit awakens in youthful hearts
It sees its luminous goal beyond the starry heavens

نہ ہو نومید نومیدی زوال علم و عرفاں ہے
امید مرد مومن ہے خدا کے راز دانوں میں

Despair not, for despair is the decline of knowledge and gnosis:
The Hope of a Believer is among the confidants of God

نہیں تیرا نشیمن قصر سلطانی کے گنبد پر
تو شاہیں ہے بسیرا کر پہاڑوں کی چٹانوں میں

Thy abode is not on the dome of a royal palace
You are an eagle and should live on the rocks of mountains

محمد علامہ اقبال

Aik NauJawan Kay Naam
Nahi Tera Nasheman Qasar e Sultani Kay Gunbad Per
Tu Shaheen Hai Basera Kar Paharoon Ki Chatanoon Per
Muhammad Allama Iqbal


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں