617

کوئی تو ہے جو نظامِ ہستی چلا رہا ہے


نظامِ ہستی

کوئی تو ہے جو نظامِ ہستی چلا رہا ہے ،….. وہی خدا ہے
دکھائی بھی جو نہ دے نظر بھی جو آرہا ہے وہی خدا ہے

تلاش اُس کو نہ کر بتوں میں وہ ہے بدلتی ہوئی رُتوں میں
جو دن کو رات اور رات کو دن بنا رہا ہے ، وہی خدا ہے

وہی ہے مشرق وہی ہے مغرب سفر کریں سب اُسی کی جانب
ہر آئینے میں جو عکس اپنا دکھا رہا ہے ،…….. وہی خدا ہے

کسی کو سوچوں نے کب سراہا وہی ہوا جو خدا نے چاہا
جو اختیارِ بشر پہ پہرے بٹھا رہا ہے ،….. وہی خدا ہے

نظر بھی رکھے سماعتیں بھی وہ جان لیتا ہے نیتیں بھی
جو خانۂ لاشعور میں جگمگا رہا ہے ،……. وہی خدا ہے

کسی کو تاجِ وقار بخشے…… کسی کو ذلت کے غار بخشے
جو سب کے ماتھے پہ مہرِ قدرت لگا رہا ہے ، وہی خدا ہے

سفید اُس کا سیاہ اُس کا ،… نفس نفس ہے گواہ اُس کا
جو شعلہء جاں جلا رہا ہے… بجھا رہا ہے ، وہی خدا ہے

KOI TU HAI JO NIZAM E HASTI CHALA RAHA HAI


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں