649

میں سخت اُداس ہو چلا ہوں


فرہاد کی آس ہو چلا ہوں
میں سخت اُداس ہو چلا ہوں

اُداس

ہجرت پہ گئے ہوں جس کے باسی
اُس صحن کی گھاس ہو چلا ہوں

جس کی نہ اُٹھے کبھی عمارت
اُس گھر کی اساس ہو چلا ہوں

شاخوں سے جھڑے ہوئے گُلوں کی
بکھری ہوئی باس ہو چلا ہوں

ٹانکے کوئی مجھ کو بادلوں میں
میں دشت کی پیاس ہو چلا ہوں

ماجدؔ مجھے جانے کیا ہوا ہے
برحق تھا قیاس ہو چلا ہوں

ماجد صدیقی

Mein Sakhat Udaas Ho Chala Hoon


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں