553

رب نے لکھ دی ہے قرآں میں فضیلت انکی


ہم پہ رحمت ہے عنایت ہے نبوت انکی
ہم تو قاصر ہیں بیاں کرنے سے شفقت انکی

دل میں اتری ہے کچھ اس طرح محبّت انکی
صدقے ماں باپ کروں ایسی ہے الفت انکی

رب نے لکھ دی ہے جو قرآں میں فضیلت انکی
اب کوئی ہم میں سے کیا لکّھے گا مدحت انکی

ہم ہیں عشّاقِ نبی شہر مدینہ سے ہمیں
آج بھی ملنے چلی آتی ہے نکہت انکی

محمّد ﷺ
محمّد ﷺ

اپنے محبوب کو پہلے تو بنایا اس نے
اور پھر جز کیا ایماں کا رسالت انکی

گو کہ بھیجا انھیں کل نبیوں میں سب سے آخر
ہاں مگر رکھ دی سبھی نبیوں پہ سبقت انکی

انکی آواز پہ آواز کو حاوی جو کریں
رب نے قرآن میں کر دی ہے مذمّت انکی

انگلیاں کٹ نہیں سکتی تھیں زلیخا تیری
ہوش ہوتا ہی کہاں دیکھ کے صورت انکی

بغضِ حیدر پہ بھی فردوس کا دعوا ہے جنھیں
مثلِ شدّاد ہی ہو سکتی ہے جنّت انکی

اصل تاریخ نصابوں میں پڑھاتے نہیں وہ
ڈر ہے کھل جائے نہ دنیا پہ حقیقت انکی

مجھ سے عاصی پہ عنایت سے عیاں ہے شارب
ڈھونڈ لیتی ہے گنہگار کو رحمت انکی

RAB NE LIKH DI HAI QURAN MAN FAZILAT UNKI


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں