1,076

بھولنے کا علاج


ناصر: یار ارشد! آج تم کچھ پریشان سے لگ رہے ہو؟
ارشد: ہاں یار میں اپنے بھولنے کی عادت سے سخت پریشان ہوں. کچھ سمجھ نہیں آتا اس کا کیا کروں؟

ناصر: کیا پھر کوئی اہم بات بھول گئے؟
ارشد: ابھی بھولا تو نہیں ہوں مگر اپنی بیوی کی سالگرہ کا دن بھول جانے کے ڈر سے ہر وقت میری جان نکلی رہتی ہے. مجھے بتاؤ میں اسکی سالگرہ کا دن ہر سال کس طرح یاد رکھوں؟

ناصر: ارے بابا! یہ بھی کوئی بڑی بات ہے؟ بس ایسا کرو کہ اپنی بیگم کی سالگرہ اس سال بھول جاؤ. مجھے پورا یقین ہے اس کے بعد مرتے دم تک تمہیں یہ دن کبھی نہیں بھولے گا

Bhoolnay Ka Ilaaj
? ”Nasir: “Yaar Arshad! Aaj Tum Kuch Preshan Say Lag Rahay Ho
Arshad: “Haan Yaar Mein Apni Bhulnay Ki Aadat Say Sakhat Preshan Hun
? ”Kuch Samjh Nahin Aata Kiya Karun
? ”Nasir: “Kiya Phir Koyi Eham Baat Bhool Gaye
Arshad: Abhi Bhola To Nahin Hun Magar Apni Bivi Ki Saalgirah Ka Din Bhool Janay Kay Dar Say Har Waqat Meri Jaan Nikli Rehti Hai, Mujhay Btao Mein Us Ki Saalgirah Ka Din Har Saal Kiss Tarha Yaad Rakhun
Nasir: Aray Baba! Yeh Bhi Koyi Bari Baat Hai? Bas Aisa Karo Keh Apni Begum Ki Saalgiraah Is Saal Bhool Jao, Mujhay Pora Yaqeen Hai Is Kay Baad Martay Dum Tak Tumhein Yeh Din Kbhi Nahin Bhoolay Ga


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں