8,464

ہم کیا جانیں دُکھ کی قیمت


ہم کیا جانیں دُکھ کی قیمت
ہم کو سارے مفت ملے ہیں

ذہیب احمد

ھے صبح دُکھ اور شام دُکھ ھے، تمام دُکھ ھے
نصیبِ انساں مدام دُکھ ھے، تمام دُکھ ھے

مَیں قطرہ قطرہ ہی پی رہا ھوں کہ جی رہا ھوں
یہ زندگی کا جام دُکھ ھے، تمام دُکھ ھے !!

نہ سُن سکو گے میری کہانی، میری زبانی
تمام دُکھ ھے، تمام دُکھ ھے، تمام دُکھ ھے

مَیں اپنے ھونے پہ کب سُکھی ھوں، بہت دُکھی ھوں
نہ خاص دُکھ ھے، نہ عام دُکھ ھے، تمام دُکھ ھے

جو سچ کہوں تو یہ کارِ الفت ھے کارِ وحشت
شروع دُکھ، اختتام دُکھ ھے، تمام دُکھ ھے !!

اِسی لیے چپ ھوں مَیں مُسلسل، یہاں ہر اک پل
کہ انتہائے کلام دُکھ ھے ، تمام دُکھ ھے !!

ھم اہلِ دل پر یہ عقدہ آخر کھولا ھے
یہاں پسِ ہر نظام دُکھ ھے ، تمام دُکھ ھے

Hum Kiya Janain Dukh ki Qeemat
Hum Ko Saray Muft Milay Hein


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں