6,417

ڈوب جائیں تو کیا تماشا ہو


وہ بلائیں تو کیا تماشا ہو
ہم نہ جائیں تو کیا تماشا ہو

یہ کناروں سے کھیلنے والے
ڈوب جائیں تو کیا تماشا ہو

بندہ پرور جو ہم پہ گزری ہے
ہم بتائیں تو کیا تماشا ہو

آج ہم بھی تری وفاؤں پر
مسکرائیں تو کیا تماشا ہو

تیری صورت جو اتفاق سے ہم
بھول جائیں تو کیا تماشا ہو

وقت کی چند ساعتیں ساغرؔ
لوٹ آئیں تو کیا تماشا ہو

ساغرصدیقی

وقت کی چند ساعتیں ساغر

Waqt Ki Chand Saa’ten Saaghir
Lot Aen To Kya Tamasha Ho


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

3 تبصرے “ڈوب جائیں تو کیا تماشا ہو

اپنا تبصرہ بھیجیں