1,227

منیر نیازی – غم ِ خاص پر کبھی چُپ رہے


کوئی داغ ہے مرے نام پر
کوئی سایہ میرے کلام پر

یہ پہاڑ ہے مرے سامنے
کہ کتاب منظر عام پر

کسی انتظار نظر میں ہے
کوئی روشنی کسی بام پر

یہ نگر پرندوں کا غول ہے
جو گرا ہے دانہ و دام پر

غم خاص پر کبھی چپ رہے
کبھی رو دیے غم عام پر

ہے منیرؔ حیرت مستقل
میں کھڑا ہوں ایسے مقام پر

منیر نیازی

منیر نیازی – غم ِ خاص پر کبھی چُپ رہے

Gham-e-Khaas Par Kabhi Chup Rahay
Kabhi Roo Diay Gham-e-Aam Par
Muneer Niyazi


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں