3,427

مائیں تو بس مائیں ہوتی ہیں


مائیں تو بس مائیں ہوتی ہیں
لب پہ ہر دم دعائیں ہوتی ہیں

مائیں تو بس مائیں ہوتی ہیں

مائیں تو بس جزائیں ہوتی ہیں
رَب کی انمول عطائیں ہوتی ہیں

زیست کی تپتی دُھوپ میں
اَبر ٹھنڈی چھائیں ہوتی ہیں

خَفا ہو کر بھی فکر مند رہنا
یہ ماؤں کی ادائیں ہوتی ہیں

آسیب مُصیبت جاتے ہیں رُک
گرد دُعا کی ردائیں ہوتی ہیں

ہر بُزرگ کی کر عزت دل سے
سانجھے باپ مائیں ہوتی ہیں

دیکھنے سے بھی ملے ثواب
سب معاف سزائیں ہوتی ہیں

کما لے جنت ، کر کے خدمت
ملتی اِک بار مائیں ہوتی ہیں

ماں سے محروم گھر میں جیسے
قبرستان سی صدائیں ہوتی ہیں

سلامت سایہ جب تک دُنیا میں
قبول سب دُعائیں ہوتی ہیں

معاف کردے گر ماں ” کبیر ”
معاف سب خطائیں ہوتی ہیں

شھزادہ کبیر

Maaen To Bus Maaen Hoti Hen
Labb Pe Her Dum Duaen Hoti Hen


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں