9,710

یا رب غمِ ہجراں میں اتنا تو کیا ہوتا

یا رب غمِ ہجراں میں اتنا تو کیا ہوتا
جو ہاتھ جگر پر ہے وہ دستِ دعا ہوتا

کچھ ہم سے کہا ہوتا

غیروں سے کہا تم نے، غیروں سے سنا تم نے
کچھ ہم سے کہا ہوتا ، کچھ ہم سے سنا ہوتا

امید تو بندھ جاتی، تسکین تو ہو جاتی
وعدہ نا وفا کرتے ، وعدہ تو کیا ہوتا

ناکام تمنا دل، اس سوچ میں رہتا ہے
یوں ہوتا تو کیا ہوتا، یوں ہوتا تو کیا ہوتا

اک عشق کا غم آفت، اور اس پر یہ دل آفت
یا دل نہ دیا ہوتا، یا غم نہ لیا ہوتا

Gheroon Say Kaha Tum Nay, Gheroon Say Suna Tum Nay
Kuch Hum Say Kaha Hota Kuch Hum Say Suna Hota

اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں