1,073

لمحے ہیں کہ اک عمر سے چپ چاپ کھڑے ہیں


صدیاں ہیں کے گزرے ہی چلی جاتی ہیں
لمحے ہیں کہ اک عمر سے چپ چاپ کھڑے ہیں

خاموش لمحے

معاشرے میں پیدا ہونے والی بے چینی میں دن بہ دن اضافہ ہوتا جا رہا ہے، مہنگائی، بیروزگاری، لوڈشیڈنگ اس کے عوامل ہو سکتے ہیں۔ امیر ہو یا غریب کوئی بھی اس سے بچا ہوا نہیں ہے کسی کو اولاد نہ ہونے کی پریشانی تو کسی کو اولاد کے نا فرمان ہونے کی پریشانی کسی کو روزگار کی پریشانی کسی کو دولت نہ ہونے کی پریشانی تو کسی کو دولت کے لٹ جانے کی پریشانی انسان کرے بھی تو کیا کرے۔

انسان کو زندگی سے ہر طرح کی امیدیں وابستہ ہوتی ہیں وہ اپنے مقاصد کے حصول کے لیے کوشاں رہتا ہے ۔اپنے حالات میں الجھا رہتا ہے کبھی سنور جاتے ہیں کبھی بگڑ جاتے ہیں اسی خوشی اور غمی کے اتار چڑہاوُ میں زندگی کٹ جاتی ہے اور وقت کا احساس نہیں ہوتا- ہر انسان کی زندگی میں ایسا ہی چل رہا ہے کویُ خوش ہے تو کویُ نا خوش- وقت بھی گزرے جا رہا ہے اور وقت کے ساتھ انسان آ بھی رہے اور جا بھی رہے-

زندگی کے ان لمحوں میں ہمیں یہ جاننا چاہیے کہ ہمیں ہر حال میں اللہ تعالیٰ کا شکرگزار ہونا چاہیے- صبر اور شکر ایمان کا حصہ ہیں- زندگی نے تو ہر حال میں گزر ہی جانا ہے- کیوں نہ اسکو بہترین بنانے کے لیے صبر وشکر سے کام لیے جائیں- سکون اور اطمینان صرف اللہ تعالیٰ کی بندگی میں ہے-

ایک حدیث قدسی ہے کہ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ جب کوئی انسان میری طرف چل کر آتا ہے تو میں دوڑ کر آتا ہوں اور جب کوئی دوڑ کر آتا ہے تو میں لپک کر آتا ہوں اور ایک وقت آتا ہے کہ میں اس کا ہاتھ بن جاتا ہوں جس سے وہ کام کرتا ہے میں اس کا پاؤں بن جاتا ہوں جس سے وہ چلتا ہے میں اس کی آنکھ بن جاتا ہوں جس سے وہ دیکھتا ہے میں اس کے کان بن جاتا ہوں جس سے وہ سنتا ہے۔

Saddiyan Hen Keh Guzray Hi Chlay Jati Hen
Lamhay Hen Keh Ik Umr Say Chup Chap Khray Hen


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں