968

سورۃ فاتحہ


الْحَمْدُ للّہ رَبِّ الْعَالَمِينَ
الرَّحْمـنِ الرَّحِيمِ
مَالِكِ يَوْمِ الدِّينِ
إِيَّاكَ نَعْبُدُ وإِيَّاكَ نَسْتَعِينُ
اھدنَــــا الصِّرَاطَ المُستَقِيمَ
صِرَاطَ الَّذِينَ أَنعَمتَ عَلَيہمْ غَيرِ المَغضُوبِ عَلَيہم وَلاَ الضَّالِّينَ

الْحَمْدُ للّهِ رَبِّ الْعَالَمِينَ

سب تعریف اللہ کے لیے ہے جو تمام عالم کا رب ہے۔بہت بخشش کرنے وا لا ،بڑا مہربان، روزِ جزا کا مالک ہے ، ہم تیری ہی عبا دت کر تے ہیں اور تجھ ہی سے مدد چا ہتے ہیں،ہم کو سیدھے راستے پر چلا ،یعنی ان لو گو ں کے را ستے پر جن پر تونے خاص انعام کیا اور جو غضبِ خدا وندی اور گمرا ہی سے سالم و محفوظ رہے۔

سب تعریفوں کا مستحق اللہ تعالیٰ ہے کیونکہ اس دنیامیں کسی کی تعریف عموماتین وجہ سے کی جاتی ہے:

(۱)جس کی ہم تعریف کررہے ہیں وہ خود صاحبِ فضل وکمال اور بذاتِ خودحسن وخوبی کے ساتھ متصف ہے

(۲)تعریف اس لیےکرتے ہیں کہ ہمارے ساتھ کسی نے احسان کابرتاؤکیا ،تواعترافِ نعمت اورجذبۂ تشکر وامتنان سے مغلوب ہوکر ہم اس کی تعریف میں رطب اللسان ہوجاتے ہیں۔

(۳)کسی سے کوئی مطلب حاصل کرناہے، تو حصولِ مطلب اورمقصد برآر ی کے لیے ہم کسی کی تعریف کرتے ہیں

اللہ تعالیٰ ان سب اسباب ووجوہات کی بناپرقابل تعریف ہے،بلکہ اُن اسباب ووجوہات کی بناپربھی، جوہمارے وہم وگمان اورپروازِتخیل سے بھی ماوراء ہیں۔

Surah Fatiha
Bismillah Hir Rahman Nir Raheem
Alhamdu lillahi Rabbil ‘alamin
Arrahmanir Rahim
Maliki Yaw middin
Iyyaka Na’budu wa Iyyaka Nasta’in
Ihdinas Siratal Mustaqim
Siratal Lazina An’amta ‘Alayhim
Ghayril Maghzubi ‘Alayhim Walazzallin


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں