1,021

آباد ہیں عبرت کے مقامات کہاں تک

نکلو جو کبھی ذات کے زنداں سے تو دیکھو
آباد ہیں عبرت کے مقامات کہاں تک

عبرت کے مقام

اﮮ ﺩِﻝ ! ﯾﮧ ﺗِﺮﯼ ﺷﻮﺭﺵِ ﺟﺬﺑﺎﺕ ﮐﮩﺎﮞ ﺗﮏ
ﺍﮮ ﺩِﯾﺪۂ ﻧﻢ ﺍﺷﮑﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﺮﺳﺎﺕ ﮐﮩﺎﮞ ﺗﮏ

ﺑﺮﮨَﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻢ، ﺁﭖ ﮐﯽ ﺑﯿﮕﺎﻧﮧ ﺭﻭِﯼ ﺳﮯ !
ﺍﭘﻨﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﮕﺮ ﺗﺮﮎِ ﻣُﻼﻗﺎﺕ ﮐﮩﺎﮞ ﺗﮏ

ﺁﺧﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﮩﺘﺎﺏ ﺗﻮ ﮨﻮ ﺍِﺱ ﮐﺎ ﻣُﻘﺪّﺭ
ﺑﮭﭩﮑﮯ ﮔﯽ ﺳِﺘﺎﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﯾﮧ ﺑﺎﺭﺍﺕ ﮐﮩﺎﮞ ﺗﮏ

ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﻋﯿﺎﮞ ﺟُﺮﻡِ ﻣﺤﺒّﺖ
ﭘﻮﺷِﯿﺪﮦ ﺭﮨﮯ ﺩِﻝ ﮐﯽ ﮨﺮ ﺍِﮎ ﺑﺎﺕ ﮐﮩﺎﮞ ﺗﮏ

ﻧِﮑﻠﻮ ﺟﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﺫﺍﺕ ﮐﮯ ﺯِﻧﺪﺍﮞ ﺳﮯ ﺗﻮ ﺩﯾﮑﮭﻮ
ﺁﺑﺎﺩ ﮨﯿﮟ ﻋِﺒﺮﺕ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﻣﺎﺕ ﮐﮩﺎﮞ ﺗﮏ

ﺭﺍﺳﺦ ﮨﻮ ﺍﮔﺮ ﻋﺰﻡ، ﺗﻮ ﮨﺮ ﺷﮯ ﮨﮯ ﻣﺴﺨﺮ
ﺍﮮ ﺍﮨﻞِ ﻧﻈﺮ، ﺷِﮑﻮۂ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﮩﺎﮞ ﺗﮏ

ﺳﻮُﺭﺝ ﮐﻮ ﻧِﮑﻠﻨﺎ ﮨﮯ، ﻧِﮑﻞ ﮐﺮ ﮨﯽ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ
ﭘَﮭﯿﻼﺋﮯ ﮔﯽ ﺩﺍﻡ ﺍﭘﻨﺎ ﺳﯿﮧ ﺭﺍﺕ ﮐﮩﺎﮞ ﺗﮏ

ﮐِﺲ ﺭﺍﮦ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﻣﻮﺳﻢِ ﮔُﻞ، ﮈﮬﻮﻧﮉ ﮐﮯ ﻻﺅ
ﺯﺧﻤﻮﮞ ﺳﮯ ﻣِﺮﮮ ﮨﻮﮔﯽ ﻣﺪﺍﺭﺍﺕ ﮐﮩﺎﮞ ﺗﮏ

احساس ﺳﮯ، ﮨﺮﺷﺨﺺ ﮨﻮﻋﺎﺭﯼ ﺟﮩﺎﮞ ﻧﺠﻤﮧ
ﺑﺎﻧﭩﻮﮞ ﮔﯽ ﻭﮨﺎﮞ ﺩﺭﺩ ﮐﯽ ﺳﻮﻏﺎﺕ ﮐﮩﺎﮞ ﺗﮏ

ﻧﺠﻤﮧ ﺍﻧﺼﺎﺭ ﻧﺠﻤﮧ

Niklo Jo Kbhi Zaat Kay Zindan Say To Dekho
Abad Hein Ibrt Kay Muqamaat Kahan Takk

اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں