2,069

میرے وطن کے اداس لوگو


میرے وطن کے اداس لوگو!

نہ خود کو اتنا حقیر سمجھو کہ کوئی تم سے حساب مانگے
نہ خود کو اتنا قلیل سمجھو، کہ کوئی اٹھ کر کہے یہ تم سے

وفائیں اپنی ہمیں لٹا دو، وطن یہ اپنا ہمیں تھما دو
اٹھو اور اٹھ کر بتادو ان کو، کہ ہم ہیں اہل ایماں سارے

نہ ہم میں کوئی صنم کدہ ہے، ہمارے دل میں بس اک خدا ہے
جھکے سروں کو اٹھا کر دیکھو، قدم کو آگے بڑھا کر دیکھو

ہے اک طاقت تمھارے سر پر
قدم قدم پر جوساتھ دے گی، اگر گرے تو سنبھال لے گی

میرے وطن کے اداس لوگو
اٹھو چلو اور وطن سنبھالو . . .!!!

(خالد حمید )

!Mery Watan Kay Udaas Loogoo
Nah Khud Ko Itna Haqeer Samjho Keh Koyi Tum Say Hisaab Mangay
Nah Khud Ko Itna Qaleel Samjho Keh Koyi Uth Kar Kehay Yeh Tum Say
Wafaain Apni Hmain Luta Do, Wattan Yeh Apna Hmain Thama Do
Uthoo Aur Uth Kar Bata Do Unko, Keh Hum Hain Ahl e Emaan Saray
Nah Hum Mein Say Koyi Sanamkadah Hai, Hamary Dill Mein Bs Ik Khuda Hai
Jhukay Saroon Ko Utha Kar Daikho, Qadam Ko Aagy Barha Kar Daikho
Hai Ik Taqat Tumhary Sir Par
Qadam Qadam Par Jo Sath Day Gi, Agar Giray To Sambhal Lay Gi
!Mery Watan Kay Udaas Loogoo
!!!…Uthoo Chalo Aur Wattan Sambhalo
Khalid Hameed


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

میرے وطن کے اداس لوگو” ایک تبصرہ

  1. جب بھی کسی تخلیق سے متاثر ھؤا جاتا ھے تخلیق کار کا نام جاننے کی ضرورت محسوس ھوتی ھے مگر ھمارے ھاں یہ پہچان شاید تولد انسانی تک محدود کردی گئی ھے جو کافی نہیں اچھی شاعری ھو یا نثر سب سے پہلے تخلیق کار کا ذکر کیا جائے تاکہ اس کو ھدیہء تبریق پیش کیا جائے جیسے کائناتی حسن کی تعریف کرتے ھوئے رب ذوالجلال کی کی جاتی ھے

اپنا تبصرہ بھیجیں