612

گزشتہ عہد گزرنے ہی میں نہیں آتا

گزر گئے پسِ در کی اشارتوں کے وہ دن
کہ رقص کرتے تھے مے خوار رنگ کھیلتے تھے

نہ محتسب کی تھی پروا نہ شہرِ دار کی تھی
ہم اہلِ دل سرِ بازار رنگ کھیلتے تھے

غرورِ جبہ و دستار کا زمانہ ہے
نشاطِ فکر و بساطِ ہنر ہوئی برباد

فقیہ و مفتی و واعظ پہ حرف گیر ہو کون؟
یہ ہیں ملائکہ اور شہر جنتِ شداد

ملازمانِ حرم نے وہ تنگیاں کی ہیں
فضائیں ہی نہ رہیں رقصِ رنگ و بو کے لیے

یہ انتظام تو دیکھو خزاں پرستوں کا
بچھائی جاتی ہیں سنگینیاں نمو کے لیے

اسی ہوس میں ہیں ہر دم یہ دشمنانِ جمال
جو سوئے رنگ اٹھے اس نظر کو گُل کر دیں

جو بس چلے کہیں ان کا تو یہ فضا بیزار
شفق کا رنگ بجھا دیں سحر کو گُل کر دیں

ہوئی ہے جانبِ محراب سے وہ بارشِ سنگ
کہ عافیت ، خمِ ابرو کی ہے بہت دشوار

ستم کیا ہے عجب منجنیقِ منبر نے
حریمِ دل کی سلامت نہیں رہی دیوار

یہ عہد وہ ہے کہ دانشورانِ عہد پہ بھی
منافقت کی شبیہوں کا خوف طاری ہے

نمازِ خوف کے دن ہیں کہ ان دنوں یارو
قلندروں پہ فقیہوں کا خوف طاری ہے

یہ ہیں وہ تیرہ دلانِ قلمروِ تاریخ
جو روشنائیِ دانش کا خون کرتے رہے

یہی تو ہیں جو حکیموں کی حکمتوں کے خلاف
ہر اک دور میں حاکم کے کان بھرتے رہے

ہیں ظلمتوں کی مربی طبیعتیں ان کی
کبھی یہ روشنیِ طبع کو نہیں مانے

ہے روشنی کا انہیں ایک ہی نظارہ پسند
کہ جشنِ فتح منے اور جلیں کتب خانے

دیا ہے کام انہیں شب کے سر پرستوں نے
سپیدۂ سحری کو سیاہ کرنے کا

ملا ہے عہدہ کلیسائے غرب سے ان کو
شعورِ مشرقِ نو کو تباہ کرنے کا

گزشتہ عہد گزرنے ہی میں نہیں آتا
یہ حادثہ بھی لکھو معجزوں کے خانے میں

جو رد ہوئے تھے جہاں میں کئی صدی پہلے
وہ لوگ ہم پہ مسلط ہیں اس زمانے میں

Guzashta Ehad Guzarny Hi Mein Nahin Aata
Yeh Hadisa Bhi Likho Mojazoon K Khanay Mein
Jo Rad Huay Thay Jahaan Mein Kayi Sadi Pehlay
Wo Loog Hum Par Musalat Hain Is Zamanay Mein
Jaun Elia

اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں