3,421

اپنے بچّوں کے لئے دامن کو پھیلا دیتی ہے ماں


موت کی آغوش میں جب تھک کے سو جاتی ہے ماں
تب کہیں جاکر رضا تھوڑا سکوں پاتی ہے ماں

فکر میں بچّوں کی کچھ اس طرح گھل جاتی ہے ماں
نوجواں ہوتے ہوئے بوڑھی نظر آتی ہے ماں

کب ضرورت ہو مری بچّے کو اتنا سوچ کر
جاگتی رہتی ہیں آنکھیں اور سو جاتی ہے ماں

پہلے بچّوں کو کھلاتی ہے سکون اور چین سے
بعد میں جو کچھ بچا وہ شوق سے کھاتی ہے ماں

مانگتی ہی کچھ نہیں اپنے لئے اللہ سے
اپنے بچّوں کے لئے دامن کو پھیلا دیتی ہے ماں

پیار کہتے ہیں کسے اور مامتا کیا چیز ہے
کوئی ان بچّوں سے پوچھے جن کی مرجاتی ہے ماں

پھیر لیتے ہیں نظر جس وقت بیٹے اور بہو
اجنبی اپنے ہی گھر میں ہائے بن جاتی ہے ماں

ہم نے یہ بھی تو نہیں سوچا الگ ہوجانے کے بعد
جب دیا ہی کچھ نہیں ہم نے تو کیا کھاتی ہے ماں

ضبط تو دیکھو کہ اتنی بے رخی کے باوجود
بد دعا دیتی ہے ہرگز اور نہ پچھتاتی ہے ماں

سال بھر میں یا کبھی ہفتے میں جمعرات کو
زندگی بھر کا صلہ اک فاتحہ پاتی ہے ماں

اس نے دنیا کو دئے معصوم رہبر اس لئے
عظمتوں میں ثانیٔ قرآن کہلاتی ہے ماں

بعد مرجانے کے پھر بیٹے کی خدمت کے لئے
بھیس بیٹی کا بدل کر گھر میں آجاتی ہے ماں

Phair Laity Hain Nazar Jis Waqt Betay Aur Bahu
Ajnabi Haye Apny Hi Ghar Mein Ban Jati Hai Maa


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں