645

مری اوقات، سب مٹی​


مٹی​

نہ پوچھو ذات، سب مٹی​
مری اوقات، سب مٹی​

جتا کر دے بھی دی تو کیا​
تری سوغات، سب مٹی​

دکھاوا آ گیا دل میں​
جو کی خیرات ، سب مٹی​

مزہ ہے شے کی قلت میں​
ہوئی بہتات، سب مٹی​

مری دھرتی جو بنجر تھی​
تو پھر برسات، سب مٹی​

میں جاگوں سو نہیں پاتا​
کہاں کی رات، سب مٹی​

بُھلا دو گے جو تُم اظہر​
مری خدمات، سب مٹی​
محمد اظہر نذیر

MERI OKAAT, SAB MATTI


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں