1,053

ماں جیسی محبت نہیں مل سکتی


مائیں تو بس مائیں ہوتی ہیں

ﺍﯾﮏ ﻋﺎﻟﻢ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮔﻠﯽ ﻣﯿﮟ جارہاتھا–
ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﻬﺎ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ کھلا، ﻣﺎﮞ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﭽﮯ ﮐﻮ ﻣﺎﺭ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ تھپڑ ﻟﮕﺎ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ، اﻭﺭ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻮ نے ﺑﮍﺍ ﺫﻟﯿﻞ ﮐﯿﺎ، ﺑﮍﺍ ﭘﺮﯾﺸﺎﻥ ﮐﯿﺎ، ﺗﻮ کوئی بات نہیں مانتا ھے، ﻧﺎﻓﺮﻣﺎﻥ ﮨﮯ، نکل جا ﻣﯿﺮﮮ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ۔

ﻭﮦ ﺑﭽﮧ ﺭﻭ ﺭﮨﺎ ﺗﻬﺎ،ﺩﻫﮑﮯ ﮐﻬﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﻬﺎ، ﺟﺐ ﮔﻬﺮ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻼ ماں ﻧﮯ ﮐﻨﮉﯼ ﻟﮕﺎ ﻟﯽ۔
ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﻬﮍﺍ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﺫﺭﺍ منظر ﺗﻮ ﺩﯾﮑﻬﻮﮞ۔ ﺑﭽﮧ ﺭﻭﺗﮯ ﺭﻭﺗﮯ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﮐﻮ ﭼﻞ ﭘﮍﺍ ﺫﺭﺍ ﺁﮔﮯ ﮔﯿﺎ ،ﺭﮎ ﮐﺮﭘﮭﺮ ﻭﺍﭘﺲ ﺁ ﮔﯿﺎ.

ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﻬﺎ ﺑﭽﮯ ﺗﻢ ﻭﺍﭘﺲ ﮐﯿﻮﮞ ﺁ ﮔﺌﮯ؟ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ، ﮐﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ چلا جاوں ﭘﮭﺮ ﺧﯿﺎﻝ ﺁﯾﺎ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﻧﯿﺎ کی ﮨﺮ ﭼﯿﺰ ﻣﻞ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ،، ﭘﺮ ﻣﺠﮭﮯ ماں کی محبت نہیں مل سکتی، ﺍﺱ لئے ﻭﺍﭘﺲ ﺁ ﮔﯿﺎ ﮨﻮﮞ۔ ﻣﺤﺒﺖ ﻣﻠﮯ ﮔﯽ اسی ﺩﺭ ﺳﮯ ﻣﻠﮯ ﮔﯽ۔

ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺑﭽﮧ ﺑﺎﺕ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻭﮨﯿﮟ ﺑﯿﭩھ گیا۔۔ ﻣﯿﮟ ﺑﻬﯽ ﻭﮨﯿﮟ ﺑﯿﭩھ ﮔﯿﺎ۔
ﺑﭽﮯ ﮐﻮ ﻧﯿﻨﺪ ﺁﮔﺊ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﺳﯽ ﺩﮨﻠﯿﺰ ﭘﺮ ﺳﺮ ﺭﮐﮭﺎ ﺳﻮ گیا.

ﮐﭽﮫ ﺩﯾﺮ ﮔﺰﺭﯼ ﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﮐﮭﻮﻻ۔ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ،ﺩﮨﻠﯿﺰ ﭘﺮ سر رﮐﮭﮯ ﺳﻮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ، ﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﺍﭨﻬﺎﯾﺎ……. ﮐﯿﻮﮞ دہلیز ﭘﺮ ﺳﺮ ﺭﮐﮭﮯ ﺳﻮ ﺭﮨﮯ ﮨﻮ؟؟
ﺑﻮﻻ، ﺍﻣﯽ ﻣﺠﻬﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﻣﺎﮞ نہیں ﻣﻞ ﺳﮑﺘﯽ. ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺩﮨﻠﯿﺰ ﮐﻮﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﮐﯿﺴﮯ ﺟﺎؤﮞ؟

ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﺑﭽﮯ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﺳﮯ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﺴﻮ ﺁ ﮔﺌﮯ، ﺑﭽﮯ ﮐﻮ ﺳﯿﻨﮯ سے ﻟﮕﺎ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﻮﻟﯽ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﯿﭩﮯ ﺟﺐ ﺗﯿﺮﺍ یقین ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮔﮭﺮ ﮐﮯ ﺳﻮﺍ ﺗﯿﺮﺍ ﮐﻮﺉ ﮔﮭﺮ ﻧﮩﯿﮟ، ﭘﮭﺮ ﮐﯿﻮﮞ ﺳﺘﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﮐﮩﻨﺎ نہیں ﻣﺎﻧﺘﺎ…. ﻣﯿﺮﺍ ﺩﺭ ﮐﮭﻼ ﮨﮯ، ﺁﺟﺎ ﻣﯿﮟ نے ﺗﯿﺮﯼ ﻏﻠﻄﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ.

ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ……..
ﺟﺐ ﮔﻨﺎﮨﮕﺎﺭ ﺑﻨﺪﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺏ ﮐﮯ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﭘﺮ اس ﻃﺮﺡ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ.
ﺭﺏ ﮐﺮﯾﻢ ﻣﯿﺮﯼ ﺧﻄﺎؤﮞ ﮐﻮ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮﺩﮮ، ﻣﯿﺮﮮ ﮔﻨﺎﮨﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮﺩﮮ،

ﺍﮮ ﺑﮯ ﮐﺴﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﺳﺘﮕﯿﺮ،
ﺍﮮ ﭨﻮﭨﮯ ﺩﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺗﺴﻠﯽ ﺩﯾﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ،
ﺍﮮ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮑﻮﻥ ﺑﺨﺸﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ذات ،

ﺍﮮ ﺑﮯ ﺳﮩﺎﺭﺍ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﺎ ﺳﮩﺎﺭﺍ ﺑﻨﻨﮯ والی ﺫﺍﺕ ،
ﺍﮮ ﮔﻨﺎﮨﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺭﺣﻤﺖ ﮐﮯ ﭘﺮﺩﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﭼﻬﭙﺎ ﻟﯿﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺫﺍﺕ،
ﺗﻮ مجھ ﭘﺮ ﺭﺣﻢ ﻓﺮﻣﺎ ﺩﮮ،

ﻣﺠﻬﮯ ﺩﺭ ﺩﺭ ﺩﻫﮑﮯ ﮐﻬﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﺑﭽﺎ ﻟﮯ،
اللہ ﺍﭘﻨﯽ ﻧﺎﺭﺍﺿﮕﯽ ﺳﮯ ﺑﭽﺎ ﻟﮯ،
ﭘﺮﻭﺭﺩﮔﺎﺭ ﺁﺋﻨﺪﮦ ﻧﯿﮑﻮﮐﺎﺭﯼ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻋﻄﺎ ﻓﺮﻣﺎ،

ﺟﺐ ﺑﻨﺪﮦ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﭘﯿﺶ ﮐﺮ دﯾﺘﺎ ﮨﮯ، ﺗﻮ ﭘﮭﺮ اللہ تعالیٰ ﺍﺱ ﺑﻨﺪﮮ ﮐﯽ ﺗﻮﺑﮧ ﮐﻮ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮ لیتا ہے.
اللہ تعالیٰ ہمیں ﺳﭽﯽ ﺗﻮﺑﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﺗﻮﻓﯿﻖ ﻋﻄﺎ فرمائے
ﺁﻣﯿﻦ ﯾﺎﺭﺏ العالمین

MAAN JESI MUHABBAT NAHI MIL SAKTI


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں