1,186

اپنی حسرتوں کی خاطر


گِرتے رہے سجدوں میں ہم اپنی حسرتوں کی خاطر
عشقِ خدا میں گِرے ہوتے تو کوئی حسرت باقی نہ رہتی

ہو کے شرمندہ گناہوں سے کبھی جا تو سہی

وہ کرے گا معاف تجھے دو اشک بہا تو سہی

رہے گی چاندنی قبر میں بھی ساتھ تیرے

تو اسکی یاد کو دل سے ذرا لگا تو سہی

نا رہے گا تو محتاج کبھی کسی کا

کیا ہے جو اللہ سے عہد وہ نبھا تو سہی

وہ ہے غفور رحیم سنتا ہے دعا سب کی

ندامت کے عالم میں ہاتھ اٹھا تو سہی

Girtay Rahey Sjdon mein Apni Hssrton Ki Khatir
Ishq e Khuda mein Giray Hotay To Koi Hasrat Baqi Na Rehti


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں