2,340

حرم شریف میں نماز کا خوبصورت منظر

بِسْمِ اللَّہ الرَّحْمَٰنِ الرَّحِيمِ

اَلۡحَمدُ لِلہ رَبِّ العٰلَمِينَۙ‏ ﴿۱﴾
سب طرح کی تعریف خدا ہی کو (سزاوار) ہے جو تمام مخلوقات کا پروردگار ہے

الرَّحمٰنِ الرَّحِيمِۙ‏ ﴿۲﴾
بڑا مہربان نہایت رحم والا

مٰلِكِ يَوۡمِ الدِّينِؕ‏ ﴿۳﴾
انصاف کے دن کا حاکم

اِيَّاكَ نَعبُدُ وَاِيَّاكَ نَستَعِينُؕ‏ ﴿۴﴾
(اے پروردگار) ہم تیری ہی عبادت کرتے ہیں اور تجھ ہی سے مدد مانگتے ہیں

اِھدِنَا الصِّرَاطَ المُستَقِيمَۙ‏ ﴿۵﴾
ہم کو سیدھے رستے چلا

صِرَاطَ الَّذِينَ اَنعَمتَ عَلَيھمۡ‏ غَيرِ المَغضُوۡبِ عَلَيہمۡ وَلَا الضَّآلِّينَ‏ ﴿۶﴾
ان لوگوں کے رستے جن پر تو اپنا فضل وکرم کرتا رہا نہ ان کے جن پر غصے ہوتا رہا اور نہ گمراہوں کے

ﺳﻮﺭہ ﺍﻟﻔﺎﺗﺤﮧ ﻗﺮﺁﻥ ﻣﺠﯿﺪ ﻛﯽ ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﯽ ﺳﻮﺭﺕ ﮨﮯ, ﺟﺲ ﻛﯽ ﺍﺣﺎﺩﯾﺚ ﻣﯿﮟ ﺑﮍﯼ ﻓﻀﯿﻠﺖ ﺁﺋﯽ ﮨﮯ ۔ ﻓﺎﺗﺤﮧ ﻛﮯ ﻣﻌﻨﯽ ﺁﻏﺎﺯ ﺍﻭﺭ ﺍﺑﺘﺪاء ﻛﮯ ﮨﯿﮟ, ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺍﺳﮯ الفَاتِحَةُ ﯾﻌﻨﯽ فَاتِحَةُ الكِتَابِ ﻛﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ۔ ﻧﻤﺎﺯ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ کا ﭘﮍﮬﻨﺎ ﺑﮩﺖ ﺿﺮﻭﺭﯼ ﮨﮯ ۔ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﻧﺒﯽ کریم صلی اللہ علیہ وسلم ﻛﮯ ﺍﺭﺷﺎﺩﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻛﯽ ﺧﻮﺏ ﻭﺿﺎﺣﺖ ﻛﺮﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ, ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ :

” لا صَلاةَ لِمَنْ لَمْ يَقْرَأْ بِفَاتِحَةِ الْكِتَابِ ” ( صحيح بخاري وصحيح مسلم )
ﺍﺱ ﺷﺨﺺ ﻛﯽ ﻧﻤﺎﺯ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺳﻮﺭہ ﻓﺎﺗﺤﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﮍﮬﯽ ۔

ﺗﻤﺎﻡ ﺗﻌﺮﯾﻔﯿﮟ اللہ ﻛﮯ ﻟﺌﮯ ﮨﯿﮟ, ﯾﺎ ﺍﺱ ﻛﮯ ﻟﺌﮯ ﺧﺎﺹ ﮨﯿﮟ, ﻛﯿﻮﮞ ﻛﮧ ﺗﻌﺮﯾﻒ کا ﺍﺻﻞ ﻣﺴﺘﺤﻖ ﺍﻭﺭ ﺳﺰﺍﻭﺍﺭ ﺻﺮﻑاللہ تعالٰی ﮨﮯ ۔ ﻛﺴﯽ ﻛﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﻛﻮﺋﯽ ﺧﻮﺑﯽ, ﺣﺴﻦ ﯾﺎ ﻛﻤﺎﻝ ﮨﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ الله تعالٰی کا ﭘﯿﺪﺍ ﻛﺮﺩﮦ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺣﻤﺪ ( ﺗﻌﺮﯾﻒ ) کا ﻣﺴﺘﺤﻖ ﺑﮭﯽ ﻭﮨﯽ ﮨﮯ ۔ ﮨﺮ ﭼﯿﺰ ﻛﻮ ﭘﯿﺪﺍ ﻛﺮﻛﮯ ﺍﺱ ﻛﯽ ﺿﺮﻭﺭﯾﺎﺕ ﻣﮩﯿﺎ ﻛﺮﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻛﻮ ﺗﻜﻤﯿﻞ ﺗﻚ ﭘﮩﻨﭽﺎﻧﮯ ﻭﺍﻻ صرف وہی ہے, ﺟﺲ ﺳﮯ ﻣﺮﺍﺩ ﻣﺨﻠﻮﻗﺎﺕ ﻛﯽ ﺍﻟﮓ ﺍﻟﮓ ﺟﻨﺴﯿﮟ ﮨﯿﮟ ۔ ﻣﺜﻼﹰ ﻋﺎﻟﻢ ﺟﻦ, ﻋﺎﻟﻢ ﺍﻧﺲ, ﻋﺎﻟﻢ ﻣﻼﺋﻜﮧ ﺍﻭﺭ ﻋﺎﻟﻢ ﻭﺣﻮﺵ ﻭﻃﯿﻮﺭ ﻭﻏﯿﺮﮦ ۔ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﺨﻠﻮﻗﺎﺕ ﻛﯽ ﺿﺮﻭﺭﺗﯿﮟ ﺍﯾﻚ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺳﮯ ﻗﻄﻌﺎﹰ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﮨﯿﮟ, ﻟﯿﻜﻦ رَبِّ الْعَالَمِينَ ﺳﺐ ﻛﯽ ﺿﺮﻭﺭﯾﺎﺕ, ﺍﻥ ﻛﮯ ﺍﺣﻮﺍﻝ ﻭﻇﺮﻭﻑ ﺍﻭﺭ ﻃﺒﺎﻉ ﻭ ﺍﺟﺴﺎﻡ ﻛﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﻣﮩﯿﺎ ﻓﺮﻣﺎﺗﺎ ﮨﮯ ۔ ﺭﺣﻤٰﻦ ﻣﯿﮟ ﺭﺣﯿﻢ ہے وہ ، ﺍﺳﯽ ﻟﺌﮯ اسے رَحْمَنَ الدُّنْيَا وَالآخِرَةِ ﻛﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ۔ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻛﯽ ﺭﺣﻤﺖ ﻋﺎﻡ ﮨﮯ ﺟﺲ ﺳﮯ ﺑﻼ ﺗﺨﺼﯿﺺ ﰷﻓﺮﻭﻣﻮﻣﻦ ﺳﺐ ﻓﯿﺾ ﯾﺎﺏ ﮨﻮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺁﺧﺮﺕ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺻﺮﻑ ﺭﺣﯿﻢ ﮨﻮﮔﺎ, وہ ﮨﺮ ﺷﺨﺺ ﻛﻮ ﺍﺱ ﻛﮯ ﺍﭼﮭﮯ ﯾﺎ ﺑﺮﮮ ﺍﻋﻤﺎﻝ ﻛﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﻣﻜﻤﻞ ﺟﺰﺍ ﺍﻭﺭ ﺳﺰﺍ ﺩﮮ ﮔﺎ ۔ ﻣﯿﮟ ﻋﺎﺭﺿﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﻭﺭ ﺑﮭﯽ ﻛﺌﯽ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻛﮯ ﭘﺎﺱ ﺗﺤﺖ ﺍﻻﺳﺒﺎﺏ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭﺍﺕ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ, ﻟﯿﻜﻦ ﺁﺧﺮﺕ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﺎﻡ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭﺍﺕ ﰷ ﻣﺎﻟﻚ ﺻﺮﻑ ﺍﻭﺭ ﺻﺮﻑ اللہ تعالٰی ﮨﯽ ﮨﻮﮔﺎ ۔ ﺍﹴ ﺗﻌﺎﻟﲐ ﺍﺱ ﺭﻭﺯ ﻓﺮﻣﺎﺋﮯ ﮔﺎ :

لِمَنِ الْمُلْكُ الْيَوْمَ؟
ﺁﺝ ﻛﺲ ﻛﯽ ﺑﺎﺩﺷﺎﮨﯽ ﮨﮯ؟

ﭘﮭﺮ ﻭﮨﯽ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﮮ ﮔﺎ :
للهِ الْوَاحِدِ الْقَهَّارِ
ﺻﺮﻑ ﺍﯾﻚ ﻏﺎﻟﺐ اللہ ﻛﮯ ﻟﺌﮯ

يَوْمَ لا تَمْلِكُ نَفْسٌ لِنَفْسٍ شَيْئًا وَالأَمْرُ يَوْمَئِذٍ لِلَّهِ ( ﺍﻻﻧﻔﻄﺎﺭ )
ﺍﺱ ﺩﻥ ﻛﻮﺋﯽ ﮨﺴﺘﯽ ﻛﺴﯽ ﻛﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﻛﮭﮯ ﮔﯽ, ﺳﺎﺭﺍ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ اللہ ﻛﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﮔﺎ ۔ ﯾﮧ ﮨﻮﮔﺎ ﺟﺰﺍ کا ﺩﻥ ۔

إِيَّاكَ نَعْبُدُ وَإِيَّاكَ نَسْتَعِينُ ﮨﻢ ﺗﯿﺮﯼ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﻛﺮﺗﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﺠﮫ ﺳﮯ ﻣﺪﺩ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ یعنی وہی عبادت کے لائق ہے اس کے علاوہ کوئی نہیں ہمارا ، وہی ﺍﺱ ﰷﺋﻨﺎﺕ ﰷ ﺧﺎﻟﻖ, ﻣﺎﻟﻚ, ﺭﺍﺯﻕ ﺍﻭﺭ ﻣﺪﺑﺮ ﺻﺮﻑ ﺍﹴ ﺗﻌﺎﻟﲐ ﮨﮯ ﻗﺮﺁﻥ ﻛﺮﯾﻢ ﻧﮯ ﻣﺸﺮﻛﯿﻦ کے لیئے کہا ہے

ﺍﮮ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮ صلی اللہ علیہ وسلم ! ﺍﻥ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﯿﮟ ﻛﮧ ﺗﻢ ﻛﻮ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﻭﺯﻣﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﺭﺯﻕ ﻛﻮﻥ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ؟ ﯾﺎ ( ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ) ﰷﻧﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺁﻧﻜﮭﻮﮞ ﰷ ﻣﺎﻟﻚ ﻛﻮﻥ ﮨﮯ؟ ﺍﻭﺭ ﺑﮯﺟﺎﻥ ﺳﮯ ﺟﺎﻧﺪﺍﺭ ﺍﻭﺭ ﺟﺎﻧﺪﺍﺭ ﺳﮯ ﺑﮯ ﺟﺎﻥ ﻛﻮﻥ ﭘﯿﺪﺍ ﻛﺮﺗﺎ ﮨﮯ؟ ﺍﻭﺭ ﺩﻧﯿﺎ ﻛﮯ ﰷﻣﻮﮞ ﰷ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ﻛﻮﻥ ﻛﺮﺗﺎ ﮨﮯ؟ ﺟﮭﭧ ﻛﮩﮧ ﺩﯾﮟ ﮔﮯﹴ اللہ ( ﯾﻌﻨﯽ ﯾﮧ ﺳﺐ ﰷﻡ ﻛﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ اللہ ﮨﮯ ) ۔ ( ﺳﻮﺭﺊ ﯾﻮﻧﺲ ۔ ٣١ )

الصِّرَاطَ الۡمُسۡتَقِيۡمَۙ‏ ﺳﯿﺪﮬﺎ ﺭﺍﺳﺘﮧ، یا اللہ! ہمیں ایسے راستے پر چلنے والا بنانا جس پر تو نے انعام رکھا ہے ﺟﺲ ﭘﺮ ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﭼﻠﮯ, ﺟﻦ ﭘﺮ ﺗﯿﺮﺍ ﺍﻧﻌﺎﻡ ﮨﻮﺍ, ان کے راستے پر نہیں (مَغْضُوبٌ عَلَيْهِمْ ﺳﮯ ﻣﺮﺍﺩ ﯾﮩﻮﺩﯼ ﺍﻭﺭ ضَالِّيْنَ ﺳﮯ ﻣﺮﺍﺩ ﻧﺼﺎﺭﱝ اور ﻋﯿﺴﺎﺋﯽ ﮨﯿﮟ) ﺟﻦ ﭘﺮ تیرا ﻏﻀﺐ ﻧﺎﺯﻝ ﮨﻮﺍ ۔ آمین

Sab Tareefain Allah Hi Kay Liay Hain Jo Tamaam Makhluqaat Ka Parwardigaar Hai
Bara Meherbaan Nehayaat Reham wala
Insaaf Kay Din Ka Hakim
Ay Parwardigar) Hum Teri Hi Ibadat Kartay Hain Aur Tujhay Say Hi Madad Mangaty Hain)
Humko Seedhay Rastay Chala
In Logoon Kay Rasty Jin Par Tu Apna Fazal o Karamn Karta Raha Na Un Kay Jin Par Gussa Hota Raha Na Gumrahoon Kay

اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں