1,011

ماہ و سال اور ہمارے اعمال


ہمارے ماہ و سال بدلتے رہتے ہیں
لیکن اعمال نہیں بدلتے

ﺗﻮﺑﮧ ، ﮔﻨﺎﮦ، ﺍﺣﺴﺎﺱ ﻧﺪﺍﻣﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﻌﺎﻓﯽ، ﻣﻘﺒﻮﻟﯿﺖ ﺍﻭﺭ ﺧﺴﺮﺍﻥ ﮐﺎ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﺑﮍﺍ ﻋﺠﯿﺐ ﮨﮯ . ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮔﻨاہ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ، ﻣﻌﺎﻓﯽ ﻣﺎﻧﮓ ﻟﯿﺘﺎ ﮨﮯ، ﺑﺎﺭﺑﺎﺭ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﭘﮭﺮ ﻣﻌﺎﻓﯽ ﻣﺎﻧﮕﺘﺎ ﮨﮯ . ﺍﻟﻠﻪ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺑﺎﺭ ﺑﺎﺭ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ . ﮔﻨاہ ﺍﮔﺮ ﺩﮬﻞ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﻧﺪﺍﻣﺖ ﺍﻭﺭ ﭼﺒﮭﻦ ﮐﯿﻮﮞ ﺑﺎﻗﯽ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﮯ؟ ﺑﮯ ﭼﯿﻦ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ؟؟

ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﻣﺴئلہ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ .. ﺍﺗﻨﮯ ﺍﭼﮭﮯ ﺍﭼﮭﮯ ﮐﺎﻣﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﺮﻏﯿﺐ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺍﺟﺮ ﮐﯽ ﺍﻣﯿﺪ ﺩﻻﺋﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ . ﻣﮕﺮ ﭘﮭﺮ ﯾﮧ ﮐﮩﮧ ﮐﺮ ﮈﺭﺍﯾﺎ ﮐﯿﻮﮞ ﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﮐﯿﺎ ﺧﺒﺮ ﺍﺗﻨﯽ ﻧﯿﮑﯿﺎﮞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﮏ ﻏﻠﻄﯽ ﺳﺐ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﺍﯾﺎ ﻏﺎﺭﺕ ﮐﺮﺩﮮ ! ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﮐﮧ ﮐﺘﻨﮯ ﮨﯽ ﺍﭼﮭﮯ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻟﻮ ، ﻣﮕﺮ ﮈﺭﺗﮯ ﮨﯽ ﺭﮨﻮ ﮐﮧ ﻭﮦ ﻗﺒﻮﻝ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ ﺑﮭﯽ ﯾﺎ ﻧﮩﯿﮟ . ﮐﻮﺋﯽ ﮐﻨﻔﺮﻣﯿﺸﻦ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ؟ ﺑﻨﺪﮦ ﺳﮑﮫ ﮐﺎ ﺳﺎﻧﺲ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮧ ﻟﮯ؟؟

ﺩﻝ ﮐﻮ ﯾﮧ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺻﻞ ﻣﻄﻠﻮﺏ ﺍﻟﻠﻪ ﺍﻭﺭ ﺑﻨﺪﮮ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﮨﮯ . ﺑﻨﺪﮦ ﺍﻟﻠﻪ ﺳﮯ ﺟﮍﺍ ﺭﮨﮯ ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﺭ ﭘﺮ ﺟﮭﮑﺎ ﺭﮨﮯ، ﮔﮭﻮﻡ ﭘﮭﺮ ﮐﺮ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﺗﺎ ﺭﮨﮯ . ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﺮﻡ ﮐﯽ ﺍﻣﯿﺪ ﻟﮕﺎﮰ ﺭﮨﮯ . ﺍﺱ ﮐﯽ ﺧﻔﮕﯽ ﺳﮯ ﮈﺭﺗﺎ ﺭﮨﮯ . ﺟﯿﺴﮯ ﺍﯾﮏ ﭼﺎﮨﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﺎ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺤﺒﻮﺏ ﺳﮯ ﺗﻌﻠﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ . ﺑﻨﺪﮦ ﺍﻟﻠﻪ ﮐﺮﯾﻢ ﮐﯽ ﺭﺣﻤﺖ ﮐﮯ ﺷﻮﻕ ﺍﻭﺭ ﺧﻔﮕﯽ ﮐﮯ ﮈﺭ ﺳﮯ ﺑﮯ ﻧﯿﺎﺯ ﻧﮧ ﮨﻮﺟﺎﮰ .

ﺑﻨﺪﮮ ﮐﻮ ﭘﺎﺭﺳﺎﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻮﺟﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺯﻋﻢ ﻣﯿﮟ ﻣﺒﺘﻼ ﮨﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﺑﭽﺎﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﻣﻘﺼﻮﺩ ﮨﮯ . ﺍﮔﺮ ﻧﯿﮑﯽ ﮐﮯ ﻣﻘﺒﻮﻝ ﮨﻮﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﻌﺎﻓﯽ ﮐﮯ ﻣﻞ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﯾﻘﯿﻦ ﮨﻮ ﺟﺎﮰ ﺗﻮﮨﻢ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﮐﺜﺮ ﻧﮧ ﺻﺮﻑ ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﻣﻄﻤﺌﻦ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ، ﺑﻠﮑﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﺗﻘﻮﯼٰ ﮐﮯ ﺯﻋﻢ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻣﺒﺘﻼ ﺭﮨﯿﮟ ﮔﮯ . ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﮐﮭﭩﮑﺎ ﮐﮧ ﻧﮧ ﺟﺎﻧﮯ ﻧﯿﮑﯽ ﻣﻘﺒﻮﻝ ﮨﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﯾﺎ ﻧﮩﯿﮟ، ﺍﺱ ﻗﺎﺑﻞ ﺗﮭﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﻏﻠﻄﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﭼﺒﮭﻦ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﻋﺎﺟﺰﯼ ﻭ ﺍﻧﮑﺴﺎﺭﯼ ﻋﻄﺎ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ . ، ﻧﮧ ﻭﮦ ﺍﻟﻠﻪ ﮐﺮﯾﻢ ﺳﮯ ﺑﮯ ﻧﯿﺎﺯ ﮨﻮﮐﺮ ﺭﺥ ﭘﮭﯿﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﺑﻨﺪﻭﮞ ﮐﮯ ﺁﮔﮯ ﮔﺮﺩﻥ ﺍﮐﮍﺍﺗﺎ ﮨﮯ .

ﯾﮧ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﻧﺪﺍﻣﺖ ﺍﻭﺭ ﻏﻠﻄﯽ ﮐﯽ ﭼﺒﮭﻦ ﻋﺠﺰﮐﮯ ﺣﺼﻮﻝ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﺮﯾﮏ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ . ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﻭﮨﯽ ﮐﺎﻡ ﮐﯿﺴﮯ ﮐﺮ ﻟﻮﮞ، ﺟﺲ ﻧﮯ ﭘﭽﮭﻠﯽ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺍﺗﻨﯽ ﺍﺫﯾﺖ ﺩﯼ ﺗﮭﯽ؟ ﺍﮔﺮ ﮐﺒﮭﯽ ﺁﮒ ﺳﮯ ﺟﻠﻨﮯ ﮐﯽ ﺍﺫﯾﺖ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﮮ ﮨﻮﮞ، ﺗﻮ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺁﮒ ﺳﮯ ﻻﺷﻌﻮﺭﯼ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻓﻮﺭﺍ ﮨﺎﺗﮫ ﮐﮭﯿﻨﭻ ﻟﯿﺘﮯ ﮨﯿﮟ .
ﺩﻭﺳﺮﺍ ﻣﻘﺼﻮﺩ ﯾﮧ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺑﻨﺪﮦ ﭼﻠﺘﺎ ﺭﮨﮯ، ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮬﺘﺎ ﺭﮨﮯ، ﺭﮐﮯ ﻧﮩﯿﮟ . ﮨﻤﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮐﮧ ﺭﺿﺎ ﺍﻭﺭ ﺟﻨﺖ ﮐﻮﻥ ﺳﮯ ﻋﻤﻞ ﺳﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻮ ﮔﯽ؟ ﻭﮦ ﻋﻤﻞ ﺟﻮ ﭘﺎﺭ ﻟﮕﺎ ﺩﮮ ، ﮐﯿﺎ ﺧﺒﺮ ﺍﺑﮭﯽ ﮨﻮﺍ ﺑﮭﯽ ﮐﮧ ﻧﮩﯿﮟ؟ ﯾﮩﯽ ﺧﯿﺎﻝ ﻣﺰﯾﺪ ﺍﭼﮭﮯ ﮐﺎﻣﻮﮞ ﭘﺮ ﺍﮐﺴﺎﺗﺎ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ . ﺑﻨﺪﮦ ﺳﻮﭼﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﮐﺮ ﻟﻮﮞ، ﺷﺎﯾﺪ ﯾﮧ ﻣﻘﺒﻮﻝ ﮨﻮ ﺟﺎﮰ . ﺷﺎﯾﺪ ﺍﺱ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﺍﺱ ﮐﻮ ﭘﺎ ﻟﻮﮞ . ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﻭﮦ ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮬﺘﺎ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ .

ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﻭﮦ ﺁﯾﺎﺕ ﺍﻭﺭ ﺍﺣﺎﺩﯾﺚ ﺟﻮ ﺫﺭﺍ ﺳﮯ ﻋﻤﻞ ﭘﺮ ﻣﻐﻔﺮﺕ ﺍﻭﺭ ﺍﺟﺮ ﻋﻈﯿﻢ ﮐﯽ ﺧﻮﺷﺨﺒﺮﯼ ﺳﻨﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ . ﺍﻥ ﮐﺎ ﻣﻨﺸﺎ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﺗﻮ ﯾﮧ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻧﯿﮑﯽ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﻋﻤﻞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺣﻘﯿﺮ ﻧﮧ ﺳﻤﺠﮭﺎ ﺟﺎﮰ . ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﮯ ﺍﻧﻔﺮﺍﺩﯼ ﻭ ﺍﺟﺘﻤﺎﻋﯽ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﯽ ﺗﮑﻤﯿﻞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮨﺮ ﻋﻤﻞ ﺿﺮﻭﺭﯼ ﮨﮯ، ﭼﺎﮨﮯ ﻭﮦ ﭘﯿﺎﺳﮯ ﮐﺘﮯ ﮐﻮ ﺳﺨﺖ ﮔﺮﻣﯽ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﻧﯽ ﭘﻼﻧﺎ ﮨﻮ، ﺭﺍﺳﺘﮯ ﺳﮯ ﺭﮐﺎﻭﭦ ﺩﻭﺭ ﮐﺮﻧﺎ ﮨﻮ، ﺍﭘﻨﮯ ﮨﻢ ﺟﻨﺴﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﺴﮑﺮﺍ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ ﮨﻮ، ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﻏﻠﻄﯽ ﭘﺮ ﭼﺸﻢ ﭘﻮﺷﯽ ﮐﺮﻧﺎ ﮨﻮ ،ﮐﺴﯽ ﮐﮯ ﺁﻧﺴﻮ ﭘﻮﻧﭽﮫ ﺩﯾﻨﺎ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﻏﯿﺒﺖ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺣﺴﺪ ﺳﮯ ﺑﭽﻨﺎ ﮨﻮ . ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﮨﻢ ﺍﻥ ﻧﯿﮑﯿﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﮮ ﮐﺎﻣﻮﮞ ﮐﻮ ﻧﻈﺮ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﮯ ، ﺟﻮ ﺑﻈﺎﮬﺮ ﺣﻘﯿﺮ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ .

ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﮐﯽ ﺁﯾﺎﺕ ﺍﻭﺭ ﺍﺣﺎﺩﯾﺚ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﺑﮩﺖ ﻧﯿﮏ ﻧﮧ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﻧﺴﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﻣﯿﺪ ﮐﯽ ﺟﻮﺕ ﺟﮕﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ . ﮔﻨﮩﮧ ﮔﺎﺭ ﺳﮯ ﮔﻨﮩﮧ ﮔﺎﺭ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﻣﯿﺪ ﭼﮭﻠﮏ ﺭﮨﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ . ﮐﯿﺎ ﺧﺒﺮ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﺭﺏ ﺍﺱ ﻧﻨﮭﮯ ﺳﮯ ﻋﻤﻞ ﺳﮯ ﺭﺍﺿﯽ ﮨﻮ ﺟﺎﮰ . ﻣﺠﮫ ﺟﯿﺴﮯ ﮔﻨﮩﮧ ﮔﺎﺭ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺏ ﺳﮯ ﻗﺮﺏ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺫﺭﯾﻌﮧ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﮯ . ﭘﺲ ﯾﮩﯽ ﻭﺟﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﺮ ﺷﺨﺺ ﮐﻮ ﮨﻢ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﭼﮭﺎ ﻋﻤﻞ ﮐﺮﺗﮯ ﭘﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﭼﺎﮨﮯ ﻭﮦ ﺑﻈﺎﮬﺮ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﻏﻠﻂ ﮐﺎﻣﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﺒﺘﻼ ﮨﻮ . ﺍﮔﺮ ﻭﮦ ﻋﻤﻞ ﺧﺎﻟﺺ ﺍﻟﻠﻪ ﮐﯽ ﺭﺿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮨﮯ، ﺗﻮ ﺍﻟﻠﻪ ﮐﺮﯾﻢ ﮐﯽ ﺭﺿﺎ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺭﺣﻤﺖ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﻥ ﭘﺮ ﭼﮭﺎ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﭘﻮﺭﯼ ﺍﻣﯿﺪ ﺩﻡ ﺁﺧﺮ ﺗﮏ ﺑﺎﻗﯽ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﮯ .

ﻏﺮﺿﯿﮑﮧ ﺍﻟﻠﻪ ﮐﺮﯾﻢ ﺍﻧﺴﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻋﺎﺟﺰﯼ، ﺍﻧﮑﺴﺎﺭﯼ، ﺍﻣﯿﺪ ﺍﻭﺭ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﺳﮯ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﺍﭼﮭﮯ ﻋﻤﻞ ﮐﮯ ﻣﺘﺤﺮﮎ ﺍﻭﺭ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﺣﻘﯿﺮ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺑﺮﮮ ﻋﻤﻞ ﺳﮯ ﺑﭽﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ

ہم سب جانتے ہیں کہ ہماری نجات اسی وقت ممکن ہے جب ہمارے نامۂ اعمال میں نیکیاں گناہوں کے مقابلے میں زیادہ ہوں۔ نیکی سے مراد ہر وہ عمل ہے جو خدا کی بیان کردہ حلا ل و حرام کی حدود قیود میں رہتے ہوئے خلوص نیت اور خوش اسلوبی کے ساتھ کیا جائے اور جس کا مقصد کسی بھی مخلوق کو جائز طور پر فائدہ پہنچانا ہو۔کچھ اعمال ایسے ہیں جو انسان کی زندگی بھر کی کمائی یعنی نیکیوں کو مٹا کر رکھ دیتے ہیں اور نیکی کی دنیا میں انسان کو تنہا اور غریب چھوڑ دیتے ہیں ۔ انسان جنہیں بہتر سمجھ کر اپنا لیتا ہے اور نتیجتاً اس کےثواب برباد اوراعمال ضائع ہوجاتے ہیں ۔

Hmary Maah O Saal Bdltay Rehty Hen
Lekin Amaal Nahi Bdltay


اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں