1,052

لایا قتیلؔ وقت ہمیں کس مقام پر

دانائی رہ گئی

پیاسی مرے خیال کی رعنائی رہ گئی
کیا جانئیے گھٹا وہ کہاں چھائی رہ گئی

ایک ایک کر کے اُڑ گئیں پرچھائیاں تمام
اب صرف آہٹوں کی مسیحائی رہ گئی

ایسا نہیں کوئی کہ ہم اپنا کہیں جسے
اب چند پتھروں سے شناسائی رہ گئی

جاتے ہیں سب کوئی نہ کوئی یاد چھوڑ کر
رخصت ہوا جو عشق تو رُسوائی رہ گئی

دیکھا کسی کی یاد کو جب مجھ سے ہمکلام
حیراں مری طرح مری تنہائی رہ گئی

لایا قتیلؔ وقت ہمیں کس مقام پر
سب ولولے چلے گئے دانائی رہ گئی

قتیل شفائی

Laya Qateel Waqt Hmen Kis Mukam Per
Sab Walwalay Chlay Gaye Danai Reh Gai

اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں