872

ہمارے حصّے میں عذر آئے

درختِ جاں پر عذاب رُت تھی نہ برگ جاگے نہ پھول آئے
بہار وادی سے جتنے پنچھی ادھر کو آئے ملول آئے

نشاطِ منزل نہیں تو ان کو کوئی سا اجرِ سفر ہی دے دو
وہ رہ نوردِ رہِ جنوں جو پہن کے راہوں کی دھول آئے

وہ ساری خوشیاں جو اس نے چاہیں اُٹھا کے جھولی میں اپنی رکھ لیں
ہمارے حصّے میں عذر آئے، جواز آئے ، اصول آئے

وہ ساری خوشیاں جو اس نے چاہیں

اب ایسے قصّے سے فائدہ کیا کہ کون کتنا وفا نِگر تھا
جب اُس کی محفل سے آگئے اور ساری باتیں ہیں بھول آئے

وفا کی نگری لُٹی تو اس کے اثاثوں کا بھی حساب ٹھہرا
کسی کے حصّے میں زخم آئے، کسی کے حصّے میں پھول آئے

بنامِ فصلِ بہار آذر وہ زرد پتے ہی معتبر تھے
جو ہنس کے رزقِ خزاں ہوئے ہیں جو سبز شاخوں پہ جھول آئے

اعزاز احمد آذر

Wo Sari Khushiyaan Jo Us Nay Chaheen
Utha Kay Daman Mein Apnay Rakh Leen
Hamary Hisay Mein Uzar Aay, Jawaz Aay, Asool Aay

اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں