7,230

قد میں چھوٹے ہوں مگر لوگ بڑے رہتے ہیں

ان گھروں میں جہاں مٹی کے گھڑے رہتے ہیں
قد میں چھوٹے ہوں، مگر لوگ بڑے رہتے ہیں

ان گھروں میں جہاں مٹی کے گھڑے رہتے ہیں

جاؤ جا کر کسی درویش کی عظمت دیکھو
تاج پہنے ہوئے پیروں میں پڑے رہتے ہیں

جو بھی دولت تھی وہ بچوں کے حوالے کر دی
جب تلک میں نہیں بیٹھوں یہ کھڑے رہتے ہیں

میں نے پھل دیکھ کے انسانوں کو پہچانا ہے
جو بہت میٹھے ہوں اندر سے سڑے رہتے ہیں

Un Ghron Mein Jahan Matti Kay Ghray Rehtay Hein
Qadd Mein Chotay, Magr Laog Bray Rehtay Hein

اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں