1,454

عمر کی ساری تھکن لاد کے گھر جاتا ہوں

عمر کی ساری تھکن لاد کے گھر جاتا ہوں
رات بستر پہ میں سوتا نہیں مر جاتا ہوں

غربت میں گِھرا ہوا شخص

میں نے جو اپنے خلاف آج گواہی دی ہے​
وہ ترے حق میں نہیں ہے تو مکر جاتا ہوں​

اکثر اوقات۔۔۔۔ بھرے شہر کے سناٹے میں
اس قدر زور سے ہنستا ہوں کہ ڈر جاتا ہوں

میرے آنے کی خبر صرف دیا رکھتا ہے
میں ہواؤں کی طرح آ کے گزر جاتا ہوں

دل ٹھہر جاتا ہے بھولی ہوئی منزل میں کہیں
میں کسی دوسرے رستے سے گذر جاتا ہوں

سمٹا رہتا ہوں بہت حلقہء احباب میں،مَیں
چار دیواری میں آتے ہی بکھر جاتا ہوں

انجم سلیمی

Umer Ki Sari Thakn Laad Kay Ghr Jata Hoon
Raat Bister Pe Mein Sota Nahi Mrr Jata Hoon

اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں