629

امیرِ شہرکے ارماں

غریبِ شہر کے تن پر لباس باقی ہے
امیر شہر کے ارماں ابھی کہاں نکلے

بہت گھٹن ہے کوئی صورت بیاں نکلے
اگر صدا نہ اٹھے کم سے کم فغاں نکلے

فقیر شہر کے تن پر لباس باقی ہے
امیر شہر کے ارماں ابھی کہاں نکلے

حقیقتیں ہیں سلامت تو خواب بہتیرے
ملال کیوں ہو کہ کچھ خواب رائیگاں نکلے

ادھر بھی خاک اڑی ہے ادھر بھی خاک اڑی
جہاں جہاں سے بہاروں کے کارواں نکلے

ستم کے دور میں ہم اہل دل ہی کام آئے
زباں پہ ناز تھا جن کو وہ بے زباں نکلے

Ghareeb e Sheher Kay Tan Par Libaas Baqi Hai
Ameer e Sheher K Armaan Abhi Kahan Niklay

اس پوسٹ پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں